miswak k mutalik islami ahkam

مسواک کے متعلق چند احکام:
مِسواک داہنے ہاتھ سے کرے اور اس طرح ہاتھ میں لے کہ چھنگلیا(چھوٹی انگلی) مِسواک کے نیچے اور بیچ کی تین انگلیاں اوپر
اور انگوٹھا سرے پر نیچے ہو اور مُٹھی نہ باندھے.

کم سے کم تین تین مرتبہ داہنے ،بائیں، اوپر ،نیچے کے دانتوں میں مِسواک کرے
اور ہر مرتبہ مِسواک کو دھولے
اور مِسواک نہ بہت نرم ہو نہ سَخْت
اور پیلو یا زیتون یا نیم وغیرہ کَڑوِی لکڑی کی ہو۔
میوے یا خوشبودار پھول کے درخت کی نہ ہو۔
چُھنگلِیا کے برابر موٹی اور زیادہ سے زیادہ ایک بالشت لمبی ہو
اور اتنی چھوٹی بھی نہ ہو کہ مِسواک کرنا دشوار ہو ۔

مِسواک جب قابلِ استعمال نہ رہے تو اسے دفن کر دیں یا کسی جگہ اِحْتِیاط سے رکھ دیں کہ کسی ناپاک جگہ نہ گرے

دانتوں کی چوڑائی میں مِسواک کرے لمبائی میں نہیں، چِت لیٹ کر مِسواک نہ کرے۔

پہلے داہنی جانب کے اوپر کے دانت مانجھے ، پھر بائیں جانب کے اوپر کے دانت ، پھر داہنی جانب کے نیچے کے ، پھر بائیں جانب کے نیچے کے۔

  جب مِسواک کرنا ہو تواسے دھولے۔ یوہیں فارغ ہونے کے بعد دھو ڈالے اور زمین پر پَڑی نہ چھوڑ دے بلکہ کھڑی رکھے اور ریشہ کی جانب اوپر ہو۔

  اگر مِسواک نہ ہو تو اُنگلی یا سنگین کپڑے سے دانت مانجھ لے۔
یوہیں اگر دانت نہ ہوں تو اُنگلی یا کپڑا مسوڑوں پر پھیر لے

(ماخوذ از بھار شریعت)

طالب دعا:
#احسان_اللہ کیانی