تازہ ترین
کام جاری ہے...
Wednesday, June 21, 2017

A Short Story of Tahajud Guzar Baba

June 21, 2017

تھجد گزار بابا:
یار!
آج پھر مسجد کی انتظامیہ نے میری بے عزتی کی ہے
انتظامیہ والے کھتے ہیں
قاری صاحب!
آج پھر آپ جماعت کے وقت سے ایک منٹ لیٹ آئیں ہیں
آخر قاری صاحب رات کو آپ کیا کرتے رہتے ہیں..؟
جلدی سو جایا کریں نا..

عثمان نے بھت دکھ سے یہ ساری داستان اپنے دوست کو سنائی

یار کیا وجہ ہے
تم کیوں لیٹ ہو جاتے ہو..؟؟
تمہیں پتا نہیں تم امام مسجد ہو
تم کوئی آلارم لگا لیا کروں
تاکہ فجر کے وقت اٹھ جاؤ
اسکے دوست نے ہمدردانہ لھجے میں عثمان سے کہا

میں تمہیں پوری بات بتاتا ہوں
میں سخت سردی میں فجر کی اذان سے آدھا گھنٹہ پہلے کا الارم لگاتا تھا
جلدی سے اٹھتا
وضو کرتا
اگر غسل کی حاجت ہوتی تو غسل کرتا
پھر تھجد کی نماز پڑھتا
اور جب فجر کی نماز کا وقت داخل ہوتا
تو اذان دے دیتا
اور سنت فجر ادا کرنے کے بعد
ٹھنڈی ٹھار مسجد میں بیٹھ کر جماعت کا انتظار کرتا رہتا تھا
میں کبھی جماعت تو کیا، اذان سے بھی لیٹ نہیں ہوا تھا
لیکن
اب مسئلہ یہ بنا ہے کہ
ایک بابا جی ڈھائی بجے مسجد  میں تھجد پڑھنے آجاتے ہیں
مسجد کا دروازہ اندر سے بند ہوتا ہے
وہ دروازہ کھٹکھٹاتے ہیں
تو میں اٹھ کر اندر سے دروازہ کھولتا ہوں
انھیں لائٹ وغیرہ جلا کر دیتا ہوں
ابھی اذان فجر میں بھی کافی وقت ہوتا ،اس لیے میں دوبارہ حجرے میں جاکر سو جاتا ہوں
اور سخت نیند کیوجہ سے فجر میں لیٹ ہوجاتا ہوں
اور
انتظامیہ والے لوگ کہتے ہیں
لگتا ہے
مولوی صاحب رات کو فلمیں دیکھتے رہتے ہیں

عثمان نے جب مجھے یہ ساری بات سنائی
تو میرے دل میں آیا
"آخر لوگ مولوی کو انسان کیوں نہیں سمجھتے"
اس کی نیند کا خیال کیوں نہیں کرتے

ہمارے اسلاف کا طرز عمل کیسا تھا
یہ بتانے کے لیے میں آپ کو ایک واقعہ سنا دیتا ہوں
شیخ احمد کبیر رفاعی رحمۃ اللہ علیہ کا معمول یہ تھا کہ جو ہی اذان ہوتی مسجد تشریف لے جاتے
ایک دفعہ کسی سبب سے کرتہ اتارا
اور خود کسی کام میں مشغول تھے
ایک پالتو بلی آکر کرتے کے ایک کونے پر سوگئی
ادھر اذان ہو گی
اب آپ سوچ رہے تھے اگر کرتا اٹھاؤں
تو بلی کی نیند خراب ہو گی اور نہ اٹھاؤں تو نماز میں تاخیر ہوتی ہے
دوسرے کرتا موجود نہ تھا
بالآخر آپ نے ایک قینچی منگوائی
ایک سائیڈ سے کرتا کاٹا اور باقی پہن کر مسجد تشریف لے گئے
جب واپس آئے
تو بلی جاچکی تھی
کرتے کے اس ٹکڑے کو اٹھایا اور اپنے کرتے کے ساتھ سی لیا

کاش !
ہمارے لوگ بھی ایسے ہوتے

تحریر :
#احسان_اللہ کیانی
21 جون 2017

0 تبصرے:

Post a Comment

اس کے متعلق آپکی کیا رائے ہے ۔۔؟؟
کمنٹ بوکس میں لکھ دیں ،تاکہ دیگر لوگ بھی اسے پڑھ سکیں

اردو میں تبصرہ پوسٹ کرنے کے لیے ذیل کے اردو ایڈیٹر میں تبصرہ لکھ کر اسے تبصروں کے خانے میں کاپی پیسٹ کر دیں۔


 
فوٹر کھولیں‌/بند کریں