اللہ کا اسم اعظم

اسم اعظم:
حدیث شریف میں ہے:
ایک آدمی مسجد میں یوں دعا کر رہا تھا
"اللَّهُمَّ إِنِّي أَسْأَلُكَ بِأَنَّ لَكَ الْحَمْدَ، لَا إِلَهَ إِلَّا أَنْتَ الْحَنَّانُ الْمَنَّانُ بَدِيعُ السَّمَاوَاتِ وَالْأَرْضِ، يَا ذَا الْجَلَالِ وَالْإِكْرَامِ، يَا حَيُّ يَا قَيُّومُ، أَسْأَلُكَ"
نبی کریم علیہ السلام نے اسے سنا تو فرمایا:
" دَعَا اللَّهَ بِاسْمِهِ الْأَعْظَمِ الَّذِي إِذَا دُعِيَ بِهِ أَجَابَ، وَإِذَا سُئِلَ بِهِ أَعْطَى"
اس نے اللہ کو اسم اعظم کے ساتھ پکارا ہے،جب اس کے ذریعے دعا کی جائے ،تو قبول ہوتی ہے،جب اس کے ذریعے سوال کیا جائے تو اللہ عطا فرماتا ہے.
"سنن ترمذی،سنن نسائی،سنن ابن ماجہ"