جرمنی میں 2015 میں 75 مساجد پر حملے کیے گئے

جرمنی میں سال 2015 میں 75 مساجد پر حملے کئے گئے.

لنک یہ ھے

http://www.trt.net.tr/urdu/ywrp/2017/05/03/jrmny-myn-msjd-pr-hmlwn-khy-wq-t-myn-ykh-wr-kh-dfh-724896#.WQmj9uWhFwo.facebook

جرمنی میں مساجد پر حملوں کے واقعات میں ایک اور کا اضافہ ہو گیا ہے۔

جرمنی کے شہر کاسیل میں 'ترکی کے محکمہ مذہبی امور  کی ترک اسلام یونین DITIBسے منسلک مرکزی جامع مسجد پر نامعلوم افراد نے حملہ کیا۔

حملہ آوروں نے مسجد کی خارجی دیواروں پر تحریریں رقم کیں اور مسجد کے شیشے توڑ ڈالے۔

حملے کے بارے میں اظہار خیال کرتے ہوئے مسجد کے سربراہ سیف الدین ایر یوریک نے کہا ہے کہ حالیہ دنوں میں یورپ میں مسلمانوں اور مساجد کے خلاف حملوں میں اضافہ ہو گیا ہے  جو ہمارے لئے باعثِ تکلیف ہے۔

ایریوریک   نے کہا کہ جرمن ذرائع ابلاغ  واقعے سے باخبر ہونے کے باوجود لا تعلق بنے ہوئے ہیں اور  وقوعہ پر آنے والے پولیس اہلکاروں نے ہمارے ساتھ  مجرموں جیسا سلوک کیا ہے۔

مسجد کے امام نے اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ "ہم ، اتحاد و یکجہتی کے حامی، امن کے طرفدار اور خوشی کی تلاش میں رہنے والے انسان ہیں یہی وجہ ہے کہ اس واقعے نے ہمیں رنجیدہ کیا ہے"۔

واضح رہے کہ جرمنی میں سال 2015 میں 75 مساجد پر حملے کئے گئے جن کی تعداد  سال 2016 میں بڑھ کر 91 تک جا پہنچی۔