Saturday, July 2, 2016

مفتی امجد علی اعظمی (صاحب بہار شریعت ) کے حالات زندگی (یونی کوڈ اردو میں )Mufti Amjad ali Azami Writer of Bahar e Shariyat


صاحب بہار شریعت کے حالات
سوال:۔۔۔۔۔۔بہار شریعت کس بزرگ کی تصنیف ہے ؟
جواب:۔۔۔۔۔۔بہار شریعت صد رالشریعہ مفتی محمد امجد علی اعظمی رحمۃ اللہ علیہ کی تصنیف ہے ۔
٭٭٭٭
سوال:۔۔۔۔۔۔مفتی امجد علی اعظمی صاحب ،کا اعلی حضرت سے کیا تعلق تھا ؟
جواب :۔۔۔۔۔۔مفتی امجد علی اعظمی صاحب ،اعلی حضرت امام احمد رضا خان بریلوی کے خلیفہ تھے ۔
٭٭٭٭

سوال:۔۔۔۔۔۔مفتی صاحب کو صد ر الشریعہ کا خطاب کس نے دیا ؟
جواب :۔۔۔۔۔۔اعلی حضرت نے آپ کو صدر الشریعہ کا خطاب دیا
٭٭٭٭

سوال:۔۔۔۔۔۔مفتی امجد علی اعظمی صاحب کب اور کہاں پیداہوئے ؟
جواب :۔۔۔۔۔۔آپ 1884ء میں گھوسی ہند میں پیداہوئے
٭٭٭٭

سوال:۔۔۔۔۔۔مفتی امجد علی اعظمی صاحب کا حافظہ کیسا تھا ؟
جواب :۔۔۔۔۔۔آپ رحمۃ اللہ علیہ کا حافظہ ایسا باکمال تھا ،کہ آپ نے ''کافیہ'' کتاب کی عبار ت ایک ہی دن میں یاد کر لی ،
٭٭٭٭

سوال:۔۔۔۔۔۔مفتی امجد علی اعظمی صاحب کے استاد کون تھے ؟
جواب :۔۔۔۔۔۔آپ کے استاد ''وصی احمد محدث سُورتی ''تھے
٭٭٭٭

سوال:۔۔۔۔۔۔محدث سُورتی نے مفتی امجد علی صاحب کے بارے میں کیا ارشاد فرمایا ؟
جواب :۔۔۔۔۔۔آپ نے فرمایا :اگر مجھ سے کسی نے پڑھا ہے ،تووہ ''امجدعلی اعظمی ''ہی ہیں ،آپ ہی نے مدرسہ اہلسنت (پٹنہ) کے صدر مدرس کیلئے صدرالشریعہ کا انتخاب کیا
٭٭٭٭

سوال:۔۔۔۔۔۔مفتی امجد علی اعظمی صاحب جس مدرسے میں پڑھاتے تھے ،اس کے متولی کون اور کیسے تھے ؟
جواب :۔۔۔۔۔۔اس مدرسے کے متولی قاضی عبد الوحید صاحب باعمل عالم دین تھے ،انکی عظمت کا اندازہ اس سے لگایا جا سکتا ہے ،جب کہ وہ بیمارہوئے تو اعلی حضرت اور محدث سورتی انکی عیادت کیلئے تشریف لائے ،اور جب ان کا انتقال ہوا ،تو اعلی حضرت نے جنازہ پڑھایا اور محدث سورتی نے قبر میں اتارا ۔
٭٭٭٭

سوال:۔۔۔۔۔۔مفتی امجد علی اعظمی صاحب نے وہ مدرسہ کیوں چھوڑا تھا ؟
جواب :۔۔۔۔۔۔قاضی عبد الوحید صاحب کی وفات کے بعد انتظام نا اہلوں کے ہاتھ میں آگیا ،صدرالشریعہ دل برداشتہ ہو کر ،ارادہ چھوڑ کر چلے گئے ۔
٭٭٭٭

سوال:۔۔۔۔۔۔مفتی امجد علی اعظمی نے مدرسہ چھوڑنے کے بعد کیا کیا ؟
جواب :۔۔۔۔۔۔آپ نے دو سال میں علم طب سیکھا اور مطب کھول لیا
٭٭٭٭

سوال:۔۔۔۔۔۔اعلی حضرت کو جب معلوم ہوا ،کہ مفتی امجدعلی اعظمی صاحب نے تدریس چھوڑ کر مطب کھول لیا ہے ،تو آپ نے کیا کیا ؟
جواب :۔۔۔۔۔۔اعلی حضرت نے صدر الشریعہ سے سوال کیا ،آپ کیا کرتے ہیں ،تو انہوں نے کہا ،مطب چلاتا ہوں ،آپ نے فرمایا :مطب بھی اچھا کام ہے ،مگر اس میں مرض کی تشخیص کیلئے صبح صبح پیشاب دیکھنا پڑتا ہے ،اس طرح مفتی صاحب کے دل میں پیشاب دیکھنے سے نفر ت پیدا ہوگی ،چند ماہ بعد اعلی حضرت نے صدر الشریعہ کے بریلی شریف میں مستقل قیام کا بندوبست کر لیا ،صدر الشریعہ بریلی شریف میں تدریس بھی کرواتے تھے ،فتوی نویسی بھی کرتے تھے ۔
٭٭٭٭

سوال:۔۔۔۔۔۔مفتی امجد علی اعظمی صاحب کتنا عرصہ اعلی حضرت کی صحبت میں رہے ؟
جواب :۔۔۔۔۔۔آپ رحمۃ اللہ علیہ 18سال اعلی حضرت کی صحبت میں رہے ۔
٭٭٭٭

سوال:۔۔۔۔۔۔مفتی امجد علی اعظمی صاحب کیسے صبر کرنے والے تھے ؟
جواب :۔۔۔۔۔۔آپ تراویح پڑھ رہے تھے ،آپ کو خبر ملی ،کہ آپ کے بڑے صاحبزادے کا انتقال ہو گیا ہے ،آپ نے ''انا للہ وانا الیہ راجعون ''پڑھا ،اور پھر فرمایا:ابھی آٹھ رکعت تراویح باقی ہیں ،پھر نماز میں مصروف ہو گئے
٭٭٭٭

سوال:۔۔۔۔۔۔مفتی امجد علی اعظمی صاحب نما زکے کیسے پابند تھے ؟
جواب :۔۔۔۔۔۔ایک دفعہ شدید بخار میں آپ پر غشی طاری ہوگئی ،جب ہوش آیا ،تو آپ نے سب سے پہلے یہ پوچھا ؟ظہر کا وقت ہے یا نہیں ؟جواب ملا:ظہر کا وقت نہیں رہا ،یہ سن کر اتنی اذیت پہنچی ،کہ آنکھوں سے آنسو جاری ہو گئے ،کسی نے عرض کی ،آپ تو بے ہوش تھے ،اس پر تو قیامت میں مواخذہ نہیں ہو گا ،آپ نے فرمایا :آپ مواخذہ کی بات کر رہے ہیں ،وقت مقررہ پر دربار الہی کی ایک حاضری سے تو محروم رہا ہوں
٭٭٭٭

سوال:۔۔۔۔۔۔آپ مسجد میں باجماعت نماز پڑھنے کے کیسے پابند تھے ؟
جواب :۔۔۔۔۔۔آخری عمر میں بینائی کمزور ہو چکی تھی ،ایک دن صبح کی نماز کو جارہے تھے ،تو کنویں میں گرنے لگے تھے ،کہ ایک عورت نے چِلا کر کہا ،ارے مولوی صاحب کنویں ہے رُک جاؤ ،تو آپ رُکے ،اس کے باوجود مسجد کی حاضری نہ چھوڑی ۔
٭٭٭٭

سوال:۔۔۔۔۔۔آپ کی نعت سنتے وقت کیفیت کیسی ہوتی تھی ؟
جواب :۔۔۔۔۔۔نعت سنتے وقت آپ دونوں ہاتھ باندھ کر ،آنکھیں بند کر لیتے ،اور باادب ہو کر بیٹھتے ،اور انتہائی توجہ کے ساتھ سنتے ،پھر کچھ ہی دیر میں آنکھوں سے اشک جاری ہو جاتے،نعت خواں پڑھ کر خاموش ہو جاتا ،لیکن کچھ دیر بعد تک بھی آپ پر وہی کیفیت طاری رہتی ۔
٭٭٭٭

سوال:۔۔۔۔۔۔آپ کی وفات کیسے ہوئی ؟
جواب :۔۔۔۔۔۔آپ 1948ء میں سفر حج کیلئے نکلے ،اور وفات پاگئے ،حدیث میںہے ،جو حج کیلئے نکلااور فوت ہوگیا ،قیامت تک اس کیلئے حج کا ثواب لکھا جا تا رہے گا (مسند ابو یعلی )
٭٭٭٭



Barelvi Ulama ,barelvi mufti Amjad Ali Azami ,Barelvi mufti Amjid Ali Azami ,india Suni muslims ,ilm e deen aur ulama e Ahle sunat barelvi ,Bahar e Shariyat k writer ki Halat e zindagi ,halat e mufti Amjad ali azami ,mufti Amjad ali azami ki zindagi urdu zuban me ,Barelvi Ulama ,barelvi mufti Amjad Ali Azami ,Barelvi mufti Amjid Ali Azami ,india Suni muslims ,ilm e deen aur ulama e Ahle sunat barelvi ,Bahar e Shariyat k writer ki Halat e zindagi ,halat e mufti Amjad ali azami ,mufti Amjad ali azami ki zindagi urdu zuban me ,Barelvi Ulama ,barelvi mufti Amjad Ali Azami ,Barelvi mufti Amjid Ali Azami ,india Suni muslims ,ilm e deen aur ulama e Ahle sunat barelvi ,Bahar e Shariyat k writer ki Halat e zindagi ,halat e mufti Amjad ali azami ,mufti Amjad ali azami ki zindagi urdu zuban me ,Barelvi Ulama ,barelvi mufti Amjad Ali Azami ,Barelvi mufti Amjid Ali Azami ,india Suni muslims ,ilm e deen aur ulama e Ahle sunat barelvi ,Bahar e Shariyat k writer ki Halat e zindagi ,halat e mufti Amjad ali azami ,mufti Amjad ali azami ki zindagi urdu zuban me ,Barelvi Ulama ,barelvi mufti Amjad Ali Azami ,Barelvi mufti Amjid Ali Azami ,india Suni muslims ,ilm e deen aur ulama e Ahle sunat barelvi ,Bahar e Shariyat k writer ki Halat e zindagi ,halat e mufti Amjad ali azami ,mufti Amjad ali azami ki zindagi urdu zuban me ,

No comments:

Post a Comment

Join us on

Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...